“Beauty is in the eye of the beholder but so is Vulgarity.”

The Way I Think

15682536056_9d1669f46b_c

“Beauty is in the eye of the beholder but so is vulgarity.”

I came across this phrase recently on a friend’s profile. As catchy as this phrase was, the article under it was also completely appealing. The whole writing was proving the point that people in west do not stare at girls because their men have a certain mentality which encourages them to respect and honor the woman herself instead of looking medially at her attire, while most of the women who cover around the globe are still targeted by the men who stare. All in all, the author proved the point that it is not the women who need to dress up according to the demands of men, rather men need to be trained to control their oozing desires on whole.

Not a day was gone by and I read a completely opposite stance on one of the leading…

View original post 805 more words

ہائے، وہ سیاہی کی بوتل

The Way I Think

Presentation2

میں کوئی چھ، سات سال کی تھی تو ایک شام میری تایا کی بیٹی جنہیں میں باجی بولتی تھی، دوکان سے سیاہی لانے کو بولا۔ ۔ اس زمانے میں اینک پین ہوا کرتے تھے جن میں نیلے یا کالے رنگ کی سیاہی بھری جاتی تھی اور سیاہی دوات یا چھوٹے پیکٹ میں آتی تھی۔۔

میں سیاہی کا پیکٹ لے کے باجی کے پاس ائی تو انھیں دوات کی شیشی والی سیاہی چاہیے تھی، پیکٹوالی نہیں۔۔

انھیں پیکٹ دیکھ کے غصہ آیا اور میرے سے پوچھا کے یہ تمہیں کس نے دیا۔۔ میں نے کہاکہ دوکاندار نے۔۔۔
انھوں نے کہا جاو یہ پیکٹ دوکان دار کے منہ پہ مار کے آَو، اور واپس کر کے سیاہی کی بوتل لے کے ٓانا۔۔۔

خوش قسمتی سے دوکاندار میرے سے کوئی تین چار سال ہی بڑا بھائی تھا۔
میں اسکی دوکان پہ گئی اور پیکٹ اس کے منہ پہ مارتے ساتھ ہی کہا کہ…

View original post 438 more words

ايک عورت جو جينا چاہتی ہے ۔۔۔

The Way I Think

298975-VEILGIRLREUTERSx-1414580321-761-640x480

کبھی کبھی میرا دل چاہتا ہے کہ خوب قہقہے لگاؤں ،اتنا ہنسوں اتنا ہنسوں کہ آنکھوں سے آنسو نکل آئیں اور میرے اندر کی ساری کڑواہٹ سارا دکھ ،ساری نفرت ،سارا غصہ ان قہقہوں کے ساتھ میرے اندر سے نکل جائے اور میں بالکل ہلکی پھلکی ہو کر ایک نئی زندگی جيوں ۔ ليکن ميں يہ نہيں کر سکتی۔

کیوں کہ ميں ایک عورت ہوں اور مجھے اپنی زندگی پر مکمل اختيار نہيں ہے ۔ ميری زندگی کی باگ دوڑ ، ميرے باپ ، بھائی ، ماموں ، چچا ، خالو او پھوپھا کے ہاتھ ميں ہے ۔ ان کی عزت ميری عزت نفس سے زيادہ اہم ہے ۔ ان کا معاشرے مين مقام ميرے سسرال ميں مقام سے زيادہ مقدم ہے ۔ ان کی وہ بيٹياں جو ابھی گھروں ميں بيٹھی ہيں مجھ سے زيادہ اہم ہيں اور ميں روز گھٹ گھٹ کر مرتی رہوں اس سے انہيں کوئی…

View original post 324 more words

Let them judge you!

The Way I Think

3658093540_e30ee2cc09_b

I am extremely sorry. I really am.” I said that almost the thirtieth time. My voice trembled with embarrassment.

It wasn’t your mistake, I was being sensitive and judged too quickly. I realized my own fault when I met you again. Dont apologize please.” She said.

I just came to know about a friend whom I had unknowingly hurt last month. She came to me and confessed her pain. Even though it was a mere misunderstanding, I was too embarrassed to figure anything out at that time. The only thing I did, was apologize to her over and over again.

It was only after the day ended, when I sat down and tried to figure out where I went wrong. A part of me felt disappointed. How could I be so insensitive?  How could I hurt someone to an extent that she had to cry about…

View original post 759 more words